رُکو تو تم کو بتائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

Wehm

Senior User
Staff Admin
Vip & Excellent
Dec 4, 2021
155
234
43

رُکو تو تم کو بتائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

کلی اَکیلے اُٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

کہا طبیب نے ، گر رَنگ گورا رَکھنا ہے​

تو چاندنی سے بچائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ بادلوں پہ کمر ’’سیدھی‘‘ رَکھنے کو سوئیں​

کرن کا تکیہ بنائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ نیند کے لیے شبنم کی قرص بھی صاحب​

کلی سے پوچھ کے کھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

بدن کو دیکھ لیں بادل تو غسل ہو جائے​

دَھنک سے خشک کرائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

سیاہی شب کی ہے چشمِ غزال کو سُرمہ​

حیا کا غازہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ دو قدم چلیں پانی پہ ، دیکھ کر چھالے​

گھٹائیں گود اُٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

کلی جو چٹکے تو نازُک ترین ہاتھوں سے​

وُہ دونوں کان چھپائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

سریلی فاختہ کُوکے جو تین مُلک پرے​

شکایت اُس کی لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

پسینہ آئے تو دو تتلیاں قریب آ کر​

پروں کو سُر میں ہلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

ہَوائی بوسہ دِیا پھول نے ، بنا ڈِمپل​

اُجالے ، جسم دَبائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ گھپ اَندھیرے میں خیرہ نگاہ بیٹھے ہیں​

اَب اور ہم کیا بجھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ گنگنائیں تو ہونٹوں پہ نیل پڑ جائیں​

سخن پہ پہرے بٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ زیورات کی تصویر ساتھ رَکھتے ہیں​

یا گھر بلا کے دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

کبوتروں سے کراتے تھے بادشاہ جو کام​

وُہ تتلیوں سے کرائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ پانچ خط لکھیں تو ’’شکریہ‘‘ کا لفظ بنے​

ذرا حساب لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

گواہی دینے وُہ جاتے تو ہیں پر اُن کی جگہ​

قسم بھی لوگ اُٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

بس اِس دلیل پہ کرتے نہیں وُہ سالگرہ​

کہ شمع کیسے بجھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ سانس لیتے ہیں تو اُس سے سانس چڑھتا ہے​

سو رَقص کیسے دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

شراب پینا کجا ، نام جام کا سن لیں​

تو جھوم جھوم سے جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

نزاکت ایسی کہ جگنو سے ہاتھ جل جائے​

جلے پہ خوشبو لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

گھروندے ریت سے ساحل پہ سب بناتے ہیں​

وُہ بادلوں پہ بنائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

جلا کے شمع وُہ جب غُسلِ آفتاب کریں​

سفیدی رُخ پہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

شکار کرنے کو جانا ہے ، کہتے جاتے ہیں​

پکڑنے تتلی جو جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

شکاریوں میں اُنہیں بھی جو دیکھیں زَخمی شیر​

تو مر تو شرم سے جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

اُٹھا کے لاتے جو تتلی تو موچ آ جاتی​

گھسیٹتے ہُوئے لائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

کلی کو سونگھیں تو خوشبو سے پیٹ بھر جائے​

مزید سونگھ نہ پائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

غلام چٹکی نہ سننے پہ مرتے مرتے کہیں​

خدارا تالی بجائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

نکاح خوان کو بس ’’ایک‘‘ بار وَقتِ قُبول​

جھکا کے پلکیں دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

ہر ایک کام کو ’’مختارِ خاص‘‘ رَکھتے ہیں​

سو عشق خود نہ لڑائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

اُتار دیتے ہیں بالائی ، سادہ پانی کی​

پھر اُس میں پانی ملائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ دَھڑکنوں کی دَھمک سے لرزنے لگتے ہیں​

گلے سے کیسے لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ سیر ، صبح کی کرتے ہیں خواب میں چل کر​

وَزن کو سو کے گھٹائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وَزن گھٹانے کا نسخہ بتائیں کانٹوں کو​

پھر اُن کو چل کے دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

حنا لگائیں تو ہاتھ اُن کے بھاری ہو جائیں​

سو پاؤں پر نہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ تِل کے بوجھ سے بے ہوش ہو گئے اِک دِن​

سہارا دے کے چلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

کل اَپنے سائے سے وُہ اِلتماس کرتے تھے​

یہاں پہ رَش نہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

تھکن سے چُور وُہ ہو جاتے ہیں خدارا اُنہیں​

خیال میں بھی نہ لائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

پری نے ہاتھ سے اَنگڑائی روک دی اُن کی​

کہ آپ ٹوٹ نہ جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

غزل وُہ پڑھتے ہی یہ کہہ کے قیس رُوٹھ گئے​

کہ نازُکی تو بتائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

شہزاد قیسؔ​

 

Mahiya

Most-active member
Writer
Feb 5, 2021
753
546
93
43
Karachi,Pakistan

رُکو تو تم کو بتائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

کلی اَکیلے اُٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

کہا طبیب نے ، گر رَنگ گورا رَکھنا ہے​

تو چاندنی سے بچائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ بادلوں پہ کمر ’’سیدھی‘‘ رَکھنے کو سوئیں​

کرن کا تکیہ بنائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ نیند کے لیے شبنم کی قرص بھی صاحب​

کلی سے پوچھ کے کھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

بدن کو دیکھ لیں بادل تو غسل ہو جائے​

دَھنک سے خشک کرائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

سیاہی شب کی ہے چشمِ غزال کو سُرمہ​

حیا کا غازہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ دو قدم چلیں پانی پہ ، دیکھ کر چھالے​

گھٹائیں گود اُٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

کلی جو چٹکے تو نازُک ترین ہاتھوں سے​

وُہ دونوں کان چھپائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

سریلی فاختہ کُوکے جو تین مُلک پرے​

شکایت اُس کی لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

پسینہ آئے تو دو تتلیاں قریب آ کر​

پروں کو سُر میں ہلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

ہَوائی بوسہ دِیا پھول نے ، بنا ڈِمپل​

اُجالے ، جسم دَبائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ گھپ اَندھیرے میں خیرہ نگاہ بیٹھے ہیں​

اَب اور ہم کیا بجھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ گنگنائیں تو ہونٹوں پہ نیل پڑ جائیں​

سخن پہ پہرے بٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ زیورات کی تصویر ساتھ رَکھتے ہیں​

یا گھر بلا کے دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

کبوتروں سے کراتے تھے بادشاہ جو کام​

وُہ تتلیوں سے کرائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ پانچ خط لکھیں تو ’’شکریہ‘‘ کا لفظ بنے​

ذرا حساب لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

گواہی دینے وُہ جاتے تو ہیں پر اُن کی جگہ​

قسم بھی لوگ اُٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

بس اِس دلیل پہ کرتے نہیں وُہ سالگرہ​

کہ شمع کیسے بجھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ سانس لیتے ہیں تو اُس سے سانس چڑھتا ہے​

سو رَقص کیسے دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

شراب پینا کجا ، نام جام کا سن لیں​

تو جھوم جھوم سے جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

نزاکت ایسی کہ جگنو سے ہاتھ جل جائے​

جلے پہ خوشبو لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

گھروندے ریت سے ساحل پہ سب بناتے ہیں​

وُہ بادلوں پہ بنائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

جلا کے شمع وُہ جب غُسلِ آفتاب کریں​

سفیدی رُخ پہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

شکار کرنے کو جانا ہے ، کہتے جاتے ہیں​

پکڑنے تتلی جو جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

شکاریوں میں اُنہیں بھی جو دیکھیں زَخمی شیر​

تو مر تو شرم سے جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

اُٹھا کے لاتے جو تتلی تو موچ آ جاتی​

گھسیٹتے ہُوئے لائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

کلی کو سونگھیں تو خوشبو سے پیٹ بھر جائے​

مزید سونگھ نہ پائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

غلام چٹکی نہ سننے پہ مرتے مرتے کہیں​

خدارا تالی بجائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

نکاح خوان کو بس ’’ایک‘‘ بار وَقتِ قُبول​

جھکا کے پلکیں دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

ہر ایک کام کو ’’مختارِ خاص‘‘ رَکھتے ہیں​

سو عشق خود نہ لڑائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

اُتار دیتے ہیں بالائی ، سادہ پانی کی​

پھر اُس میں پانی ملائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ دَھڑکنوں کی دَھمک سے لرزنے لگتے ہیں​

گلے سے کیسے لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ سیر ، صبح کی کرتے ہیں خواب میں چل کر​

وَزن کو سو کے گھٹائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وَزن گھٹانے کا نسخہ بتائیں کانٹوں کو​

پھر اُن کو چل کے دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

حنا لگائیں تو ہاتھ اُن کے بھاری ہو جائیں​

سو پاؤں پر نہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

وُہ تِل کے بوجھ سے بے ہوش ہو گئے اِک دِن​

سہارا دے کے چلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

کل اَپنے سائے سے وُہ اِلتماس کرتے تھے​

یہاں پہ رَش نہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

تھکن سے چُور وُہ ہو جاتے ہیں خدارا اُنہیں​

خیال میں بھی نہ لائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

پری نے ہاتھ سے اَنگڑائی روک دی اُن کی​

کہ آپ ٹوٹ نہ جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

غزل وُہ پڑھتے ہی یہ کہہ کے قیس رُوٹھ گئے​

کہ نازُکی تو بتائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں​

شہزاد قیسؔ​

Haye Wahh
 
  • Like
Reactions: Wehm

Advertisement